P1060176

ٹریفک پولیس آزاد کشمیر 2014-2015 حادثات میں واضع کمی دیکھی گئی

میرپور(یاسر شریف ملک) محکمہ پولیس کی ٹریفک مینجمنٹ میں بہتری کی جائے تاکہ حادثات میں کسی حد تک کمی ممکن ہو سکے اس سلسلہ میں دن بدن بہتری لائے جانے کی مکمل کوششیں کی جارہی ہیں ٹریفک پولیس کے پاس صرف چالان ہی ایک ہتھیار ہے جسے ٹریفک خلاف ورزیوں پر استعمال کیاجارہا ہے تاکہ حادثات میں کمی لائی جا سکے اس کے ساتھ ساتھ ٹریفک پولیس آزاد کشمیر بھر میں روڈ سیفٹی اور ٹریفک قوانین کی آگاہی کے لیے بھی اقدامات کررہی ہے ۔ سال 2015میں آزادکشمیر بھر میں 55بل بورڈز لگوائے گئے ،50,000پمفلٹس تقسیم کیے گئے، 115سکولوں اور کالجوں میں سیمینار لیکچر ز کو آرگنا ئز کیاگیا ۔ اس کے علاوہ ٹریفک پولیس میں تعینات ملازمین کو 5ٹریفک کورسز بھی کروائے گئے۔ اس کے علاوہ موٹر وہیکل ایگزا مینر ز کو PTSمیں 03روزہ کو رس بھی کروایاگیا۔ بعد ازاں ٹریفک قوانین رپر عملدرآمد کرواتے ہوئے خلاف ورزیوں کے مرتکب پائے جانے والے ڈرائیور ان کو 270456چالان کرتے ہوئے چالانات کی مد میں 95098750/-روپے جرمانہ کیاگیا۔ سال 2014میں 459حادثات ہوئے جس کی نسبت سال 2015میں 385حادثات رونماہوئے۔ اس طرح حادثات میں واضع کمی واقع ہوئی ہے۔ سب سے زیادہ ضلع میرپور میں 48114چالان 21372000/-روپے جرمانہ 7445گاڑیاں ضبط 435ڈرائیور ز گرفتار ہوئے۔ اس کے بعد مظفرآباد میں 55745چالان 18214900/-روپے جرمانہ 16356گاڑیاں ضبط 38ڈرائیورز گرفتار ہوئے ۔ ضلع بھمبر میں 38150چالان14140150/-جرمانہ 4201گاڑیاں ضبط 04ڈرائیورز گرفتار ہوئے۔ ضلع کوٹلی میں 35951چالان 11836500/-روپے جرمانہ 3625گاڑیاں ضبط 1704ڈرائیورز گرفتار ہوئے۔ ضلع راولاکوٹ میں28721چالان9688600/-روپے جرمانہ 1924گاڑیاں ضبط 512ڈرائیورز گرفتارہوئے۔ ضلع باغ مین 30460چالان9058450/-روپے جرمانہ 842گاڑیاں ضبط ہوئیں۔ ضلع سدھنوتی میں13084چالان 4207650/-روپے جرمانہ 529گاڑیاں ضبط 44ڈرائیورز گرفتاہوئے ۔ ضلع ہٹیاں بالا مین 10980چالان3839150/-روپے جرمانہ 306گاڑیاں ضبط 05ڈرائیورز گرفتاہوئے۔ ضلع نیلم میں 4677چالان 1502650/-روپے جرمانہ 3829گاڑیاں ضبط 01ڈرائیور گرفتار ہوئے۔ ضلع حویلی میں4574چالان 1238700/-روپے جرمانہ 129گاڑیاں ضبط 4ڈرائیورز گرفتار ہوئے۔ ڈپٹی انسپکٹر جنرل پولیس ٹریفک آزادجموں وکشمیر چوہدری سجاد حسین کے مطابق گزشتہ (۵)سال میں بڑھتے ہوئے حادثات کی وجہ روڈ انجینئر نگ ، گاڑیوں کی فٹنس کا نہ ہونا اور ڈرائیور ان کی جانب سے ٹریفک قوانین کی پابندی نہ کرناہے۔ روڈ فرنیچرز کی بہتری اور گاڑیوں کو فٹنس سرٹیفکیٹ کے اجراء کااختیار محکمہ پولیس کے پاس نہ ہے۔ جبکہ ٹریفک قوانین پر عملدآمد ( انفورسمنٹ) محکمہ پولیس شعبہ ٹریفک کی ذمہ داری ہے۔ مزید جس میں ڈرائیونگ ٹیسٹ کے نظام موثر اور کمپیوٹر ائز کرنا، ٹریفک ٹکٹنگ کو اور دفتری نظام کو کمپیوٹرائز کرنا جیسے کئی مراحل زیر تکمیل ہیں ۔ جو آئندہ چند ہفتوں میں انشااللہ مکمل کیے جائیں گے۔ ڈی آئی جی ٹریفک چوہدری سجاد نے مزید بتایا کہ کسی بھی ریاست اور معاشرہ میں ٹریفک پولیس اور عوام الناس کے رویے اس علاقے اور معاشرے کے آئینہ دار ہوتے ہیں۔ ڈرائیور ان حضرات اپنی گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کے کاغذات مکمل کروا کرپاس رکھیں۔ لائسنس ہولڈرز ہی گاڑیاں اور موٹر سائیکلز چلائیں۔ اور لوڈنگ اور ادور سپیڈنگ نہ کریں۔ دوران ڈڑائیونگ موبائل فون کااستعمال ہرگزنہ کریں۔ موٹر سائیکل سوار ہیلمٹ کااستعمال ضرور کریں۔ ہیلمٹ استعمال نہ کرنے کی وجہ سے کئی نوجوان اپنی قیمتی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھتے ہیں۔ ڈرائیورز حضرات کے تعاون سے ہی ٹریفک کے مسائل پر قابو پایا جاسکتاہے اور حادثات کو کم کیاجاسکتاہے ۔ ان تمام اقدامات کامقصد صر ف اور صرف عوام کی جان وتحفظ ہے۔ ٹریفک پولیس کو چالان کرنے کی کوئی ضرورت نہیں اگر عوام ان ہدایات پر عمل کرے۔

Share this:

Related News

Comments are closed

Jobs: career@azadnews.co.uk
News: news@azadnews.co.uk
Enquiries: info@azadnews.co.uk
Tel: +44 7914314670 | 07588333181

Copyright 2015 © AZAD is a part of Indigo Marketing & Media Productions Ltd.
41 West Riding Business Center, BD1 4HR |08657270| England & Wales.